Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

Are you looking for Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2021?

If yes then read the poetry below.

Poetry in Urdu is sharing Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2021 with you. This poetry is for Imam Hussain a.s lovers and who love Karbala.

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

قتل حسینؑ اصل میں مرگ یزید ہے اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد

Qatl E Hussain a.s Asal mein marg e yazeed(lanti) tha Islam Zinda hota ha har Karbala ky baad

شاہ است حسین، بادشاہ است حسین دین است حسین، دین پناہ است حسین سر داد، نداد دست درِ دست یزید حقا کہ بنائے لا الہ است حسین

Shah Asst Hussain a.s, Baadshah e Asst Hussain a.s Deen Asst Hussain a.s Deen Panaah e Asst Hussain a.s

Sarr Daad Naa Daad Dasst Daar Dasst E Yaazid Haqqah Ky Binay e Laa Elaah Asst Hussain a.s

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

کیا صرف مسلمان کے پیارے ہیں حسینؑ چرخِ نوعِ بشر کے تارے ہیں حسینؑ انسان کو بیدار تو ہو لینے دو ہر قوم پکارے گی ہمارے ہیں حسینؑ

Kya Sirf Musalman Ke Pyare Hai Husain (A.S) Charkh-E-Noh-E-Bashar ke Tare Hai Husain (A.S) Insaan Ko Bedaar To Ho lene do Har Qaum Pukaregi Hamare Hai Husain (A.S)

 

غرور ٹوٹ گیا ، کوئی مرتبہ نہ ملا ستم کے بعد بھی کچھ حاصل جفا نہ ملا سر حسین ملا ہے یزید کو لیکن شکست یہ ہے کہ پھر بھی جھکا ہوا نہ ملا

Ghuroor toot gaya koi martaba na mila jafa k baad unhe hasil-e-jafa na mila Sar-E-Hussain a.s mila hai yazeed ko lekin Shikast ye hai ke phir bhi jhuka howa na mila

افضل ہے کل جہاں سے گھرانہ حسین کا نبیوں کا تاجدار ہے نانا حسین کا اِک پل کی تھی بس حکومت یزید کی صدیاں حسین کی ہیں زمانہ حسین کا

Affzal hai koul Jahan sey gharana hussain Ka, Nabiyeon ka tajdaar hai nana hussain Ka, Aik pal kei thei bass hakoumat yazid Kei, Sadiyaan hussain kei Hain zamana hussain Ka.

 

عجب مذاق ہے اسلام کی تقدیر کے ساتھ کٹا حسین ؑ کا سر نعرہ تکبیر کے ساتھ

Ajab Mazaq Hai Islam Ki Taqdeer K Sath, Kaata Hussain (A.S) Ka Sar Nara-e-Takbeer K Sath.

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

قتلِ حسین اصل میں مرگِ یزید ہے اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد

Qatil-e-Hussain (A.S) asal mein marg-e-yazeed ha Islam zinda hota hai her karbala ke bad.

دل میں ہے مجھ بے عمل کے داغِ عشقِ اہلِ بیتؑ ڈھونڈتا پھرتا ہے ظلِ دامنِ حیدر مجھے

Dil mein ha mujh be amal ke dagh-e-ishaq-e- Ahle Bait Dondhta phirta ha zile daman-e-Haider mujhe.

فراتِ وقتِ رواں ! دیکھ سوئے مقتل دیکھ جو سر بلند ہے اب بھی وہ سر حسینؑ کا ہے

Ferat-e-waqat rawan dekh soo-e-maqtal dekh Jo sar buland ha ab bhi woh sar Hussain (A.S) ka ha.

جہاں پہنچے شہیدانِ وفا کے خوں کی بو آئی قدم جس جس جگہ رکھے زمینِ کربلا پائی

Jahan punche shaheedan-e-wafa ke khun ky boo aai Qadam jis jis jagha rakhe zameen karbala paye

تو نے صداقتوں کا نہ سودا کیا حسینؑ باطل کے دل میں رہ گئی حسرت خرید کی

Tu ne sadaqton ka na saoda kia Hussain (A.S) Batil ke dil mein reh gai hasrat khreed ke

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

Tu Kehta Hay Samajta Hay Ali as Ko Khuda Honay Ka Dawa Kar Raha Hay? تو کہتا ہے، سمجھتا ہوں علیؑ کو خدا  ہونے کا دعویٰ  کر  رہا  ہے

؟

Ishq Ali as Main Is Say Bachna Wajib Hay Jisko Sochtay Rehnay Ki Bemari Hay

عشقِ علی میں اس سے بچنا واجب ہے جس  کو  سوچتے  رہنے  کی  بیماری ہے

Chahay Do Nabion Nay Mil Kar Deewar Banai Ho Madar-e-Haider sa Kay Rastay Main Aegi To Tootay Gi

چاہے دو دو نبیوںؑ نے مل کر دیوار بنائی ہو مادرِ حیدرؑ کے رستے میں آئے گی تو ٹوٹے گی

Sadain De Rahi Hain Ajj Bhi Kaba Ki Dewarain Sakhi Kitnay Dino Say App Apny Ghar Nahi Ayy

صدائیں دے رہی ہیں آج بھی کعبہ کہ دیواریں سخی کتنے دنوں سے آپ اپنے گھر نہیں آئے

Qabr E Zahra sa Par Parhay Pathar Kahin Wo Hi Na Hoon Zainab O Kalsoom sa Par Barsay Thay Jo Bazar Main

قبرِ زہراؑ پر پڑے پتھر کہیں وہ ہی نا ہوں زینبؑ و کلثومؑ پر برسے تھے جو بازار میں

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

رازِ کن کا سارا منظر آشکارہ ہو گیا یعنی اصغرؑ کے تبسم کا اشارہ ہو گیا شام کے لشکر سے آیا خیمہءِ شبیرؑ تک آگ کے شعلوں سے اٹھ کر حرؑ ستارا ہو گیا چوم کر عباسؑ کے چلو کو جو پانی گرا نہر سے کٹتے ہوئے کوثر کا دھارا ہو گیا جب سجے گا جوفِ کعبہ پر علم سرکارؑ کا پھر کہوں گا شیخ سے کعبہ ہمارا ہو گیا زخم پہ جب جونؑ کے بوسہ دیا شبیرؑ نے عطر میں تبدیل خوں سارے کا سارا ہو گیا

Hikmat Likhon Jurat Likhon Hamla Likhun Asgar as Teri Muskan Ko Kiya Kiya Likhun?

حکمت لکھوں جرات لکھوں حملہ لکھوں اصغرؑ  تری مسکان  کو  کیا  کیا  لکھوں

Larnay Ata To Dikhata Tumhain Haider as Ka Jalal Tum Samajtay Ho KiAsgar as Pay Jawani Kam Hay Jao Lay Jao Yea Sokha Hua Darya Apna Tishnagi Meri Ziada Hay Yea Pani Kam Hay

لڑنے آتا تو دکھاتا تمھیں حیدرؑ  کا جلال تم سمجھتے ہو کہ اصغرؑ  پہ جوانی کم ہے جاؤ لے جاؤ یہ سوکھا ہوا دریا اپنا تشنگی میری زیادہ ہے یہ پانی کم ہے

Kul Bahattar 72 Hastiyon Ka Faiz Hay Khak-e-Shifa Han Magar Qasim as Ka Hissa Us Main Sab Say Badh Kay Hay

کُل  بہتر  ہستیوںؑ  کا  فیض  ہے  خاکِ  شفاء ہاں مگر قاسمؑ کا حصّہ اس میں سب سے بڑھ کے ہے

 

9 Lakh Say Ladhai Thi Qasim as Ki Is leay Isnay Badan Kay Tukro Ka Lashkar Bana Liya

نو لاکھ سے لڑائی تھی قاسمؑ کی اسلیے اس نے بدن  کے ٹکڑوں کا  لشکر  بنا لیا

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

Syeda Zahra sa Hain Waris Chadar Tatheer Ki Yea WarasatMain Mili Thi Maa Khadija Say Unhain

سیّدؑہ زہرؑا ہیں وارث چادرِ تطہیر کی یہ وراثت میں ملی تھی ماں خدیجؑہ سے اِنھیں

Dar-e-Batool sa Pay Kar Li Hay Nokari Ham Nay Ab Aor Ham Say Kahin Nokari Nahi Hogi

درِ  بتولؑ  پہ کرلی  ہے  نوکری  ہم  نے اب اور ہم سے کہیں نوکری نہیں ہوگی

Sirf Alfaz Nahi Syeda sa i Midhat Main Shad-O-Mad Zer-O-Zabar Bhi Jinan Kay Zamin Hain

صرف الفاظ نہیں سیدہؑ  کی مدحت  میں شدومد زیر و زبر بھی جناں کے ضامن ہیں

Yea Muhammad (S) Ko Pata Hay Ya Khuda Janta Hay Kiyon Muhammad (S) Sa Nabi Beti Ko Maa Manta Hay

یہ محمّدؐ کو پتا ہے یا خدا جانتا ہے کیوں محمّدؐ سا نبیؐ بیٹی کو ماں مانتا ہے

Main Jab Bhi Sochta Hoon Sans Meri Ruk Jati Hay Bibi sa Ki Tooti Pasliyon Say Sans Laina Kitna Mushkil Hay

میں جب بھی سوچتا ہوں سانس میری رکتی ہے بی بیؑ کہ  ٹوٹی  پسلیوں  سے  سانس  لینا  کتنا  مشکل  ہے

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

Sitam Ki Guzri Hay Ik Aesi Rat Zahra sa Par Ali as Kay Samnay Utha Hay Hath Zahra sa Par

ستم کی گزری ہے اک ایسی رات زہراؑ پر علیؑ کے سامنے ،، اٹھا  ہے  ہاتھ زہراؑ  پر

Gham-e-Hussain as Main Apny Ghamon Ko Bhoolnay Walo Main Tum Pay Manqabat Likh Kar Farishton Ko Sunaunga

غمِ حسینؑ میں اپنے غموں کو  بھولنے  والو میں تم پہ منقبت لکھ کےفرشتوں کو سناؤں گا حسنین اکبر

Kahaf Ki Aayat Aor Nezay Pay Sar Shabbir as Ka Kainat-e-Hamd Ki Yea Sab Say Bahtar Hamd Hay

کہف کی آیات اور نیزے پہ سر شبیرؑ کا کائناتِ حمد کی یہ سب سے بہتر حمد ہے

Jab Bhi Shabbir as Say Pocha Tera Rutba Abbas as Fakhr Say Bolay Wo Zahra sa Ka Hay Beta Abbas as

جب بھی شبیر ع سے پوچھا تیرا رتبہ عباس ع فخر سے بولے وہ زہرہ ع کا ہے بیٹا عباس ع

Daikho To Nazar Walo Abbas as Kay Rozay Say Shabbir as Ka Roza Bhi Kaba Nazar Ata Hay

دیکھو تو نظر والو،عباسؑ کے روضے سے شبیرؑ کا روضہ  بھی کعبہ

  نظر  آتا  ہے

 

Ashura ki Dua in Hindi and English

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

Us Ghar Ki Majlison Main Jahan Chat Pay Ho Alam Dadi Ka Hath Thamay Sakina sa Bhi Ati Hain

اس گھرکی مجلسوں میں جہاں چھت پہ ہو علم دادی کا ہاتھ تھامے سکینہؑ بھی آتی ہیں

Hamara Kam Alam Par Diya Jalana Hay Sambhal Kay Kesay Guzarna Hay Yea Hawa Janay

ہمارا  کام  علم  پر  دیا  جلانا  ہے سنبھل کے کیسے گزرنا ہے یہ ہوا جانے

Ajj Likhnay Hain Sakina saKay Fazail Ay Khuda Mujh Ko Kagaz Ki Jaga Roshan Sitara Chaheay

آج لکھنے ہیں سکینہؑ کے فضائل اے خدا مجھ کو کاغذ کی جگہ روشن ستارہ چاہیے

Is Wastay Main Choomta Rehta Hoon Alam Ko Bali Sakina sa Daikh Kay Khush Hoti Hain Bohut

اس واسطے میں چومتا رہتا ہوں عؑلؑم کو بالی سکینہؑ دیکھ کے خوش ہوتی ہیں بہت

Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022

Adhura Padh Rahay Thay Log Fath-e-Sham Say Pehlay Wilayat Ka Hamain Kalma Padhaya Bint-e-Haider as Nay

ادھورا پڑھ رہے تھے لوگ فتحِ شام سے پہلے ولایت کا ہمیں کلمہ پڑھایا بنتِؑ حیدرؑ نے

Zainab sa Sy Mangnay Ka Tareeqa Kuch Aur Hay Jesay Hussain as Kartay Thay Aesay Sawal Kar

زینبؑ سے مانگنے کا طریقہ کچھ اور ہے جیسے حسینؑ کرتے تھے ایسے سوال کر

Yazeed (Lanti) Tujh Say Yahi Bhool Ho Gaye Tu Ny Yeh Samjha Aam Si Aurat Ka Nam Hay Zainab sa

یزید تجھ سے یہی بھول ہو گئی تو نے یہ سمجھا عام سی عورت کا نام ہے زینبؑ

Muharram Poetry In Urdu | Karbala Poetry in Urdu 2022

عید گزری گی ابھی یعنی کے عیدِ قرباں آپ نے پورا کیا ہوگا یہ رکنِ ایماں چند شرطیں ہیں ذبیحا کی برائے  انساں شرط اوّل ھے کہ کمسن نا ہو بیمار نا ہو اور بھوکا نا ہو پانی کا طلبگار نا ہو روبرو سامنے حیوان کے حیوان نا ہو وقتِ ذبح ہو گھڑی بھر کو پریشان ہو شرط یہ بھی ھے چھری بھی نا دکھاؤ اس کو ذبح  سے پہلے قضا سے نا ڈراؤ اس کو ہو چھری تیز مگر ہاتھ ہو نرمی سے رواں ایک ہی وار میں ہوجائے ذبیحا قرباں

Also Read : Eid E Ghadeer Poetry In Urdu – Ghadeer Shayari 2022

If you like our Muharram Poetry In Urdu 2022 | Karbala Poetry in Urdu 2022 then show some support and share it with your friends and family and also share it on Facebook.

Islamic Poetry In Urdu – 10 Best Islamic Shayari

Author Image
Humza ali

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *